حکومت نے الیکشن کمیشن کے ضابطہ اخلاق قانون میں تبدیلی کا فیصلہ کر لیا

وفاقی کابینہ نے بھی اس تبدیلی کے لیے آرڈیننس کی منظوری دے دی ہے

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 19 فروری 2022ء) : حکومت نے الیکشن کمیشن کے کوڈ آف کنڈکٹ قانون میں تبدیلی کا فیصلہ کرلیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق حکومت نے الیکشن کمیشن کے کوڈ آف کنڈکٹ قانون میں تبدیلی کا فیصلہ کرلیا ہے، اور وفاقی کابینہ نے آرڈیننس کی منظوری بھی دے دی ہے۔ میڈیا ذرائع کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان کے کوڈ آف کنڈکٹ پر تمام سیاسی جماعتوں کو تحفظات تھے، قانون کے منظوری کے بعد وزراء اور پارلیمنٹرینز انتخابی مہم چلا سکیں گے۔خیال رہے کہ کوڈ اف کنڈکٹ قانون میں تبدیلی سے انتخابات کی مہم میں وزرا، اراکین اسمبلی سب حصہ لے سکیں گے۔ اس سے پہلے وزراء اور ارکان پارلیمنٹ کی الیکشن کمپین میں حصہ لینے پر پابندی تھی۔ حصہ لینے پر ارکان پارلیمنٹ کو الیکشن کمیشن کے شوکاز نوٹسز کا سامنا کرنا پڑتا تھا۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ لاہور ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن کے قواعد کو کالعدم قرار دے دیا تھا جس پر الیکشن کمیشن نے لاہور ہائی کورٹ کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کیا تھا، جس کے بعد ستمبر 2015ء میں سپریم کورٹ نے لاہور ہائی کورٹ کا الیکشن کمیشن کے کوڈ آف کنڈکٹ پر حکم امتناع کا فیصلہ کالعدم قرار دیتے ہوئے ضمنی انتخاب میں الیکشن کمیشن کا کوڈ آف کنڈکٹ بحال کر دیا تھا۔سپریم کورٹ کا کہنا تھا کہ ضمنی انتخابات کے دوران اراکین پارلیمنٹ اور وزراء اپنے انتخابی حلقوں کا دورہ نہیں کر سکتے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں