بھارتی میڈیا کا ترکی پر کشمیری حریت پسندوں کی مدد کرنے کا الزام

نئی دہلی (مانیٹرنگ ڈیسک) ترکی اور پاکستان کے ابھرتے ہوئے تعلقات کو لے کر بھارت میں خوف و ہراس پھیلنے لگا۔ بھارتی میڈیا ترکی پاکستان کے بڑھتے ہوئے تعاون کو دیکھ کر ایک بار پھر دہشتگردی کا پرانا راگ الاپنا شروع ہو گیا ہے اور ترکی پر مقبوضہ کشمیر میں مداخلت تک کا الزام عائد کردیا ہے۔جب امریکہ، اسرائیل اور بھارت کو چھوڑ کر اقوام متحدہ نے حیران کن طور پر ترکی کو دہشتگردی کی پشت پناہی کرنے والے ملکوں میں نامز د کیا تو بھارتی میڈیا کو یہ الزام عائد کرنے کا موقع مل گیا کہ انقرہ مقبوضہ کشمیر میں حریت پسندوں کی مد د کررہا ہے۔ ، جبکہ عرب ممالک میں اس کا اتحادی قطر بھی سرگرمیوں میں اس کے ساتھ ہے۔بھارتی خبر رساں ادارے کے مطابقبھارتی حکام نے معروف عالم دین ذاکر نائیک کی ذمہ داری بھی پاکستان اور ترکی پر ڈال دی ہے۔ایک سینئر حکومتی نمائندے کا کہنا ہے کہ ترکی کی نظریں بھارتی مسلمانوں پر ہیں اور پچھلے کچھ عرصے کے دوران انقرہ نئی دہلی میں زیادہ دلچسپی لے رہا ہے۔بھارتی میڈیا کے مطابق ترکی جنوبی ایشیا میں اثر و رسوخ بڑھانے کے ساتھ ساتھ عالم اسلام میں سعودی عرب کو پیچھے چھوڑتے ہوئے بڑا کردار ادا کرنے کی تیاریاں کر رہا ہے۔ جبکہ ترک صدر رجب طیب اردوان سلطنت عثمانیہ کے ماضی کو زندہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں