مسجد نبوی ﷺ کے بعد مسلمانوں کی ایک اور بڑی عبادت گاہ کھول دی گئی

مقبوضہ بیت المقدس(ڈیلی پاکستان آن لائن)کورونا وائرس کی وجہ سے گزشتہ اڑھائی ماہ سے بند مسجد اقصیٰ کو بھی نمازیوں کیلئے کھول دیا گیاہے۔نماز کی ادائیگی کیلئے آنے والے لوگوں کو احتیاطی تدابیر پر عملدرآمد کی ہدایت کی گئی ہے۔

برطانوی نیوز ایجنسی رائٹرز کے مطابق مسجد اقصیٰ کو اتوار کے روز اڑھائی ماہ کے کورونا لاک ڈاون کے بعد نمازیوں اور سیاحوں کیلیے کھول دیا گیاہے تاہم حکام نے کہا ہے کہ مسجد میں آنے والوں پر احتیاطی تدابیر پر عملدرآمد لازم ہوگا۔ 

مسلمانوں کے تیسرے بڑے مقدس مقام کو رواں سال پہلی بار ماہ رمضان میں بند رکھا گیاتھا اور مسلمان اس سال ماہ مقدس میں قبلہ اول  میں عبادت سے محروم رہے تھے جبکہ وہاں عید کی نماز بھی نہیں ہوسکی تھی۔

سجد کے کھلنے پر سیکڑوں لوگ نماز فجر کیلئے مسجد پہنچیے۔ ام ہشام نامی مقامی شہری کا کہناتھا کہ مسجد کھلنے پر انہیں یوں محسوس ہورہا ہے کہ جیسے انہیں دوبارہ سانس لینے کا موقع مل گیا ہو۔ وہ اللہ تعالیٰ کے بے حد شکر گزار ہیں۔

اسلامک وقف کونسل کی جانب سے کورونا کے پھیلاو میں کمی کا جائزہ لینے کے بعد مسجد کو کھولنے کا فیصلہ کیاگیاہے تاہم کونسل نے فیصلہ کیا ہے کہ مسجد آنے والوں کیلیے ماسک پہننا اور دیگر حفاظتی تدابیر اختیارکرنا لازم ہوگا تاکہ یہ وائرس مزید نہ پھیل سکے۔

رائٹرز کے مطابق نماز کیلیے لوگوں کی تعداد کی حدمتعین نہیں کی گئی تھی، نماز فجر میں تقریبا سات سو لوگوں نے شرکت کی۔ اس موقع پر اسرائیلی پولیس کی بھی بڑی تعداد وہاں تعینات رہی۔

خیال رہے کہ اسرائیل میں سترہ ہزار افراد کورونا وائرس سے متاثر جبکہ 284 ہلاک ہوئے ہیں ۔ مقبوضہ مغربی کنارے میں 386کیسز سامنے آئے جبکہ تین اموات ہوئیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں