وزیربلدیات راجہ نصیراحمدکی اقرباء پروری کی انتہاء،دونوں بھتیجوں کولوکل گورنمنٹ بورڈ میں B-17 کی پوسٹوں پرتقرر کر دیا ،سیّدزینب علی گردیزی

میرپور( راجہ قیصر افضل سے)وزیر بلدیات راجہ نصیر کی اقرباء پروری،میرٹ کی دھجیاں اڑاتے ہوئے اپنے دوحقیقی بھتیجوں کو نوازتے ہوئے کو لوکل گورنمنٹ بورڈ میں B-17کی پوسٹوں پر تقر ر کر دیا۔اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوان ایک ماہ سے میرٹ لسٹ طلب کر رہے ہیں جبکہ وزیر موصوف بحیثیت چئیر مین لوکل گورنمنٹ بورڈ کا بھر پور فائدہ اُٹھاتے ہوئے آزاد کشمیر میں گڈ گورننس اور میرٹ کی پالیسی کو کھڈے لائن لگا گیا۔ایک ہی گھر کے دو حقیقی بھائیوں کا ایک ہی محکمہ لوکل گورنمنٹ بورڈ میں B-17 کی پوسٹوں پر تقرری کر کے ثابت کر دیا کہ آزاد کشمیر کے اندر میرٹ نام کی کوئی شے نہیں۔غریبوں کے لئے NTS اورPSC جیسے ادارے قائم کر کے عوام کو گمراہ کیا جا رہا ہے جبکہ امراء کے لئے کوئی ادارہ نہیں کیونکہ وہ اس قابل ہی نہیں ہوتے کہ NTS اورPSC کر کے اعلیٰ پوسٹوں پر کوالیفائی کر سکیں۔ ان خیالات کا اظہار باغ آذادکشمیر سرسیداں سے تعلق رکھنے والے مسٹر سید زینب علی گردیزی نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ بعض ذرائع نے پہلے ہی میڈیا میں یہ خبریں چلائی تھیں اور انہی تحفظات کا اظہار کیا تھا کہ وزیر بلدیات کا بھتیجاسٹاف آفیسر کی پوسٹ پر بھرتی ہوگا۔انہوں نے کہا کہ میری تعلیمی قابلیت ایم فل ہے اور میں نے لوکل گورنمنٹ بورڈ میں B-17 سٹاف آفیسر کی اسامی پر ٹاپ کیا، جو کہ اوپن میرٹ کی تھی اس پر ٹیسٹ و انٹرویو دیا،جس میں چئیر مین لوکل گورنمنٹ بورڈ راجہ نصیر نے خود انٹرویو میں بیٹھ کر ڈنڈی ماری اور میرٹ پامال کیا۔زینب علی گردیزی نے کہا کہ مسٹر افضال احمد ولد تسلیم احمد سکنہ انوہی سرہوٹہ تحصیل کوٹلی کی تقرری کی جو کہ صرف بی اے پاس ہے جو کہ بعد ازاں تبدیل کر کے بطور چیف آفیسر میونسپل کارپوریشن کوٹلی تعینات کیا گیا،اسی طرح راجہ نصیر کا ایک اور حقیقی بھتیجا اور مسٹر افضال کا حقیقی بھائی مسٹر دانیال احمد ولد تسلیم احمد کو اسسٹنٹ سیکرٹری لوکل گورنمنٹ بورڈ میرٹ کی دھجیاں بکھیرتے ہوئے مظفرآباد تعینات کر دیا۔سٹاف آفیسر کی اوپن میرٹ اسامی پر کم از کم130لوگ پورے آزاد کشمیر سے شامل ہوئے،جو ان کے بھتیجوں سے تعلیمی قابلیت میں بہت آگے تھے۔ان دونوں بھائیوں کا ایک ہی محکمہ میں تعینات ہونا آزاد کشمیر حکومت کے لئے کھلا چیلنج ہے جس سے ثابت ہو گیا کہ آزاد کشمیر میں میرٹ نام کی کوئی چیز نہیں ہے۔سفارشی اور نا اہل لوگوں کو وزراء کی ایماء پر ڈیپارٹمنٹل سلیکشن کے ذریعہ اعلیٰ عہدوں پر فائز کیا جاتا ہے جو کرپشن،اقرباء پروری اور میرٹ کی پامالی کو فروغ دیتے ہیں اگر یہ پوسٹیں پی ایس سی کے ذریعہ پُر کی جاتیں تو یہ لوگ ہر گز اس کے اہل نہ تھے۔انہوں نے وزیر اعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر خان،وزیر اعظم پاکستان عمران خان،صدر ریاست سردار مسعود خان،چیف سیکرٹر ی آزاد کشمیر چیف جسٹس سپریم کورٹ آف آزاد کشمیر سے اپیل کی ہے کہ ہمارے ساتھ ہونے والی نا انصافی کا ازالہ کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں