مسلسل 45 منٹ تک جنسی زیادتی کا نشانہ بننے والی خاتون نے اپنے مجرم کو معاف کردیا کیونکہ۔۔۔

ولنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) نیوزی لینڈ میں ایک خاتون کو ایک شخص نے 45منٹ تک جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا اور اس پرجسمانی تشدد کیا لیکن اس خاتون نے اب اپنے مجرم کو معاف کر دیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق 49سالہ سارا پریس نامی یہ خاتون نیوزی لینڈ کے ساﺅتھ آئی لینڈ کی رہائشی ہے جسے جیکب جینسن نامی جنسی درندے نے ستمبر 2017ءمیں زیادتی کا نشانہ بنایا۔ جیکب اس کے گھر گیا اور دروازے کی گھنٹی بجائی۔ جب سارا نے دروازہ کھولا تو ملزم اندر داخل ہو گیا اورکہا کہ ”میں ڈیڑھ گھنٹے کے لیے زندہ ہوں، پھر میری موت واقع ہو جائے گی چنانچہ میں مرنے سے پہلے تمہیں جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے جا رہا ہوں۔
یہ کہتے ہی اس نے سارا پر حملہ کر دیا اور مزاحمت کرنے پر اسے تشدد کا نشانہ بنایا۔ تشدد سے سارا کے سر اور چہرے پر شدید چوٹیں آئیں۔ملزم ذہنی مریض تھا اور سارا کے گھر کے قریب واقع نیلسن ہسپتال کے ایمرجنسی ڈیپارٹمنٹ سے فرار ہو کر آیا تھا۔ سارا نے گزشتہ روز ٹی وی این زیڈ کے ’سنڈے پروگرام‘ میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ”اس شخص نے میرے ساتھ ایسا سلوک کیا جیسے میں انسان نہیں بلکہ گوشت کا ایک ٹکڑا تھی۔ وہ اس قدر وحشی تھا کہ میں اسے روکنے کے لیے کچھ نہ کر سکی، تاہم میں اس کا الزام اسے نہیں دیتی کیونکہ اس کی ذہنی حالت ہی ایسی تھی۔ جب اس نے مجھے جنسی زیادتی کا نشانہ بنانا شروع کیا تو میرے وجود کا ایک حصہ بھی ایسا تھا جس نے میرا ساتھ چھوڑ دیا، میں نے صرف اپنی جان بچانے کی کوشش کی۔ میں اس قدر خوفزدہ ہو گئی تھی کہ میں جنسی زیادتی سے بچنے کے لیے مزاحمت نہ کر سکی۔ وہ شخص تو ذہنی مریض تھا۔اس سارے واقعے میں اگر کسی کا قصور تھا تو وہ ہسپتال کا عملہ تھا جو اس شخص پر نظر نہ رکھ سکا اور وہ وہاں سے بھاگ نکلنے میں کامیاب ہو گیا۔ چنانچہ میں اس شخص کو معاف کرتی ہوں۔“

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں