آپریشن کے زریعے بچے پیدا کرنے والی حواتین ایک بار یہ خبر ضرور پڑھ لیں

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) حالیہ سالوں میں آپریشن کے ذریعے زچگی کی شرح بہت زیادہ بڑھی ہے۔ بعض خواتین میں تو پیچیدگیوں کی وجہ سے آپریشن کرنا پڑتا ہے تاہم بعض خود بھی آپریشن کے ذریعے زچگی کا انتخاب کرتی ہیں۔ اب سائنسدانوں نے اس حوالے سے خواتین کو سخت وارننگ جاری کر دی ہے۔ میل آن لائن کے مطابق سائنسدانوں نے خواتین کو آپریشن کے ذریعے بچے پیدا کرنے سے سختی سے منع کرتے ہوئے کہا ہے کہ جو بچے آپریشن کے ذریعے پیدا ہوتے ہیں ان میں موٹاپے کا شکار ہونے اور انہیں شوگر کا مرض لاحق ہونے کا خطرہ بہت زیادہ بڑھ جاتا ہے۔

کنگز کالج لندن کے سائنسدانوں نے اس تحقیق میں سینکڑوں خواتین اور ان کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں پر تجربات کیے اور کئی سال تک انہیں زیرنگرانی رکھ کر نتائج مرتب کیے۔ تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ پروفیسر ٹم سپیکٹر کا کہنا تھا کہ ”جو بچے فطری طریقے سے پیدا ہوتے ہیں، پیدائش کے وقت ہی بے شمار فائدہ مند بیکٹیریا ان کے جسم میں داخل ہو جاتے ہیں۔ یہ بیکٹیریا انہیں موٹاپے، دمے اور شوگر جیسے امراض سے بچاتے ہیں اور ان کی قوت مدافعت میں اضافہ کرتے ہیں، جس سے وہ دیگر بیماریوں سے بھی محفوظ رہتے ہیں۔ ہماری تحقیق میں جو بچے آپریشن کے ذریعے پیدا ہوئے تھے وہ دوسرے بچوں کی نسبت زیادہ موٹاپے کا شکار تھے اور انہیں دمہ، شوگر اور دیگر بیماریاں لاحق ہونے کا خطرہ بھی دوسرے بچوں کی نسبت کئی گنا زیادہ تھا۔“

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں