عام استعمال کی وہ چیزیں جو بجٹ کے بعد مہنگی ہوجائیں گی

وفاقی حکومت کی جانب سے پیش کیے گئے بجٹ 2019-20 میں عام استعمال کی متعدد اشیا بھی مہنگی کردی گئی ہیں۔

بجٹ 2019-20 میں چینی پر سیلز ٹیکس 8 سے بڑھا کر 17 فیصد کردیا گیا ہے جس کے بعد چینی کی قیمت میں ساڑھے 3 روپے فی کلو اضافہ ہوگا۔ وفاقی حکومت نے بجٹ میں کولڈ ڈرنکس پر سیلز ایکسائز ڈیوٹی ساڑھے 11 فیصد سے بڑھا کر 13 فیصد کر دی۔ درآمدی مرغ، بکرے، بیف اور مچھلی کے گوشت ، خوردنی تیل اور گھی پر 17 فیصد ٹیکس عائد ہوگا۔حکومت کی جانب سے خشک دودھ اور پنیر پر سیلز ٹیکس کو 17 فیصد سے کم کرکے 10 فیصد کردیا گیا ہے۔

آئندہ مالی سال کے بجٹ میں سونے، چاندی، ہیرے کے زیورات پر سیلز ٹیکس بڑھانے کا فیصلہ کیا گیا ہے تاہم بجٹ تقریر میں یہ واضح نہیں کیا گیا کہ ان چیزوں پر کتنا ٹیکس عائد کیا جائے گا

مالی سال 2019-20 کے بجٹ میں سیمنٹ پر بھی فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی میں اضافے کی تجویز دی گئی ہے۔ سیمنٹ پر ایکسائز ڈیوٹی پہلے ڈیڑھ روپے فی کلو تھی جسے بڑھا کر 2 روپے کردیا گیا ہے، حکومت کے اس اقدام کے باعث سیمنٹ کی بوری کی قیمت میں 25روپے کا اضافہ ہوجائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں