میاں بیوی کے درمیان روزبروزلڑائی جھگڑے دوران ہمبستری اس غلطی کی وجہ سے ہوتے ہیں؟حضرت علی ؑ کے بقول اس منحوست سے بچاجاسکتاہے

میاں بیوی کے درمیان کبھی کبھارلڑائی جھگڑامعمول کی بات ہے مگرخرابی اس وقت ہوتی ہے جب یہ لڑائی جھگڑے کبھی کبھارکے بجائے روزبروزہوناشروع ہوجائیں۔میاں بیوی کے درمیان لڑائی جھگڑے سے پورے گھرکاسکون تباہ وبربادہوجاتاہے۔گھرمیں نحوست کے بادل چھائے رہتے ہیں اس وجہ سے گھرمیں بے سکونی ،مالی پریشانیوں میں اضافہ کے باعث بنتاہے۔میاں بیوی کے لڑائی جھگڑے کے سلسلہ کی انتہاطلاق پرجاکر رکتی ہے اورطلاق اللہ تعالیٰ کوناپسندیدہ فعل ہے۔حدیث نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں ہے کہ جب کوئی طلاق دیتاہے توزمین اورآسمان حل جاتے ہیں۔اللہ تعالیٰ ہمارے گھروں میں سکون عطافرمائے۔میاں بیوی میں لڑائی کی متعددوجوہات ہوسکتی ہیں مگرجووجہ حضرت علی علیہ اسلام نے بتائی ہے وہ تمام لڑائی جھگڑوں کی جڑہے، جس وجہ سے گھروں میں بے سکونی ہوتی ہے۔حضرت علی علیہ اسلام نے میاں بیوی میں لڑائی جھگڑے کیوجہ بتادی ہے جس پرعمل کرکے ہم ایسی بے سکونی سے بچ سکتے ہیں۔حضرت علی علیہ اسلام نے فرمایاکہ جب میاں بیوی ہمبستری کرتے ہیں توانزال کی صورت میں منی کوایک ہی کپڑے سے صاف کرنالڑائی جھگڑے کاسبب بنتاہے۔اس وجہ سے حق زوجیت اداکرنے کے بعدمنی کوایک ہی کپڑے سے صاف نہیں کرناچاہیے۔اللہ پاک سب کواپنے حفظ وامان میں رکھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں