پڑھیئے کامریڈ شاہ نواز علی شیر ایڈووکیٹ (مرکزی آرگنائزر جموں کشمیر عوامی ورکرز پارٹی )کی تحریر ترقی پسند لیڈر ،کامریڈفانوس گجر کی جدائی!!!


عوامی ورکرز پارٹی کے مرکزی صدر اور عظیم ترقی پسند راہنماء کامریڈ فانوس گجر پاکستان،ہندوستان سمیت منقسم جموں و کشمیر کے محنت کشوں اور عوام میں ایک نمائندہ حثیت کے حامل شخصیت تھیں جہنوں نے زندگی کے آخری سانس تک محکوم،غلام،مظلوم ،استحصال زدہ پسے ہوئے طبقات ،اقوام و اقلیتوں کے حقوق کی لڑائی بڑی جرتمندی سے لڑی جس کی وجہ سے وہ ساری دنیا کے محنت کشوں میں یکساں مقبولیت کے حامل ہونے کے ناطے ترقی پسندی و انقلاب کی زبردست علامت تصور کیے جاتے تھے ۔طبقاتی ،قومی اور ریاستی جبر و تشدد،سامراجیت و آمریت ،مذہبی انتہاء پسندی،فرسودگی ،دولت پسندی کے خلاف ناقابل فراموش جدوجہد کی اسی تناظر میں ان کی ساری زندگی جہد مسلسل سے عبارت و مشروط رہی۔کامریڈ کی وفات سے اس وقت پاکستانی ترقی پسند و محنت کش جہاں گہرے صدمے سے دوچار ہیں وہاں اس کے ساتھ آزادجموں کشمیر ،گلگت بلتستان کے محنت کش و ترقی پسندبھی بڑے سانحہ سے نڈھال ہیں۔کامریڈ فانوس گجر نے عوامی ورکرز پارٹی گلگت بلتستان اور جموں کشمیر عوامی ورکرز پارٹی کے قیام ،نشوونمااور فروغ میں کلیدی کردار ادا کیا ۔کامریڈ بابا جان سمیت دیگر درجنوں اسیران کے پشتبان کے طور پر اپنا بھرپور جاندار کردار اداکرتے انسانی حقوق کی بنیادی خلاف ورزیوں کو منظر عام پر لایا۔کامریڈ فانوس گجر منقسم ریاست جموں کشمیر کی وحدت کی مکمل بحالی کے حصول اور گلگت بلتستان و آزاد جموں کشمیر سمیت دیگر اکائیوں جموں ،وادی،پونچھ،کشتوڑ اور لداخ کے عوام کے معاشی اور سماجی حقوق کی بحالی کے لئے پرامن جمہوری جدوجہد پر زور دیتے وہ استعماری و حکمران اشرافیہ کی سازشوں کا بخوبی ادراک رکھتے ہوئے ریاست جموں کشمیر کے باشندگان کے جذبات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ۔وہ اس بات پر یقین رکھتے تھے کہ آزاد جموں کشمیر اور گلگت بلتستان کے عوام پر مسلط نوکر شاہانہ نو آبادیاتی (کالونیل) نظام کے خاتمے کے بغیر ان خطوں کے عوام معاشی ،سیاسی اور سماجی حقوق حاصل نہیں کرسکتے اس وجہ سے کامریڈٖ گلگت بلتستان و آزاد جموں کشمیر کے عوام کی مشترکہ جدوجہد کے زبردست حامی تھے ۔یہی وجہ ہے کہ وہ ان دونوں خطوں میں پارٹی کی تمام تقریب،تربیتی اسکولز ،سیمنار میں شرکت کرتے۔ہر درد و غم کو اپنا درد سمجھتے اور محسوس کرتے۔انہوں پاکستانی و عالمی حلقوں میں اس بات پر ہمیشہ زور دیا کہ پاکستان آزاد جموں کشمیر اور گلگت بلتستان کے عوام کے حق حکمرانی کو تسلیم کرے تاکہ بااختیار حکومتیں تشکیل پا سکیں،بیرونی ریاست،فرد اور ادروں کے ہاتھوں استحصال و جبر کا خاتمہ یقینی بن سکے۔
استحصال زدہ طبقات کا مسیحا قائد انقلاب فانوس گجر 25اپریل 1958کو بونیر کے علاقے چغرزئی کے ایک چھوٹے سے گاوں ریال بدال حوڑ میں ظفر گجر کے گھر پیدا ہوئے ابتدائی تعلیم گورئمنٹ پرائمری سکول بدال سے حاصل کی اور گورئمنٹ ہائی سکول گہاگرہ سے میٹرک جبکہ گورئمنٹ ڈگری کالج ڈگر سے بی اے کا امتحان پاس کیا کامریڈ فانوس گجر زمانہ طالب علمی ہی سے انقلابی ترقی پسند سو چ و فکر کے جذبہ سے سرشار تھے ۔1970میں اپنی سیاسی زندگی کا آغاز عوامی نیشنل پارٹی سے کیا اور طلبہ تنظیم پختون اسٹوڈنٹس فیڈریشن کے سرگرم کارکن و راہنماء کے طور پر سامنے آئے۔آپ کا شمار باچا خان اور ولی خان کے قریبی دوستوں میں ہوتا تھا یہی بنیادی وجہ تھی کہ آپ طویل عرصہ تک عوامی نیشنل پارٹی سے منسلک رہے ۔ضلع بونیر کے پسماندہ استحصال زدہ علاقے سے انقلاب و ترقی پسند ی کا علم بلند کرتے ہوئے پختوانخواہ،پاکستان و دنیا کے کئی ممالک میں محنت کش طبقہ کی توانا آواز بنے۔اسی سوچ و فکر کو عملی جامہ پہنانے اور پسماندہ عوام کی محرومیوں کو دور کرنے کی غرض سے عملی انتخابی سیاست میں قدم رکھا ۔ملکی و غیر ملکی سطح کے اجلاس ،کانفرنس ،سیمنار،اسکولز اور فورم پر نمائندہ حثیت اختیار کر لی۔پاکستان بھارت کشیدگی کو کم کرانے اور پرامن مذاکرات و تعلقات کی بحالی بارے بطور پاکستانی نمائندہ کئی مرتبہ پاکستان بھارت وفود کا حصہ بنے ۔میدان سیاست سے اپنی بے لوث خدمات رقم کرنے کے ساتھ ساتھبطور قلم کار، روزنامہ جدت،روزنامہ شہبازو دیگر اخبارات کے لئے مرقوم کرتے رہے اور مسائل کو حقیقی سائنسی عہد کے تقاضوں و بنیادوں پر اجاگر کیا ۔1988کے عام انتخابات پر عوامی نیشنل پارٹی کی قیادت سے اختلافات کی بنیاد پر ضلع شانگلہ ،ضلع بونیر سے قومی اسمبلی کی نشست کے لئے بطور آزاد امیدوار الیکشن لڑے۔مظلوم پسماندہ عوام و طبقہ کے مسائل کو اجاگر کرنے کی غرض سے1993میں پاکستان عوامی پارٹی کے طور پر الگ سے سیاسی جماعت کی بنیاد رکھی ۔اپنی پارٹی کے پلیٹ فارم سے ہر الیکشن میں بطور امیدوار حصہ لیا۔سوشلسٹ نظریہ کی نسبت 2012میں لیبر پارٹی پاکستان،ورکرز پارٹی پاکستان اور پاکستان عوامی پارٹی کے عوامی ورکزرپارٹی میں انضمام پر آپ عوامی ورکرز پارٹی کے مرکزی صدر منتخب ہوئے۔آپ کا شمار عوامی ورکرز پارٹی کے بانی و فعال راہنماوں میں ہوتا تھا آپ نے بطور مرکزی صدر پارٹی کو صوبہ خٰیبر پختونخواہ سمیت بلوچستان ،سندھ پنجاب ،گلگت بلتستان ،آزاد جموں کشمیر میں منظم کرنے کے لئے دورے کیے بیرونی ممالک سعودی عرب،یو اے ای،ملیشیاء،یمن،انڈونیشیاء،انڈیا ،بنگلہ دیش و دیگر متعدد ممالک کے بھی دورے کیے جس سے بیرون ممالک میں پارٹی کو خاصی پذرائی ملی۔جنرل ضیاء الحق کے دور آمریت میں آپ کو کراچی میں احتجاجی ریلی کے دوران گرفتار کیا ۔چار سال حبیب جالب کے ہمراہ کوٹ لکھپت جیل میں قید وبند کی صعوبتیں برداشت کیں ،کوڑے مارے جانے اور سخت اذیتوں کی وجہ سے آپ کی ایک کڈنی ناکارہ ہو چکی تھی لیکن اس کے باوجود آمرانہ ،سرمایہ درانہ و جاگیردرانہ نظام سے سمجھوتہ نہ کیا۔کامریڈ فانوس گجر نے تین شادیاں کیں تھیں پسماندگان میں بیویاں ،ایک بھائی اور بھتیجا عثمان گجر باقی ہیں۔یکم دسمبر کو بونیر کے کلپانی نامی گاوں میں پارٹی کارکنان کے ہمراہ موجود تھے کہ دل کا دورہ پڑنے پر جانبر نہ ہو سکے۔آپ کی جدوجہد ناقابل فراموش اور مشعل راہ ہے جس پر چل کر غیر طبقاتی سماج کا قیام ممکن ہے ۔آپ کی جدوجہد کے اعتراف میں خراج عقیدت پیش کرنے کے لئے پاکستان سمیت دنیا بھر میں کامریڈ فانوس کے تعزیتی ریفرینس ہو رہے ہیں۔اس کے علاوہ دنیا بھر سے انقلابی ترقی پسند راہنماوں نے آپ کو خراج عقیدت پیش کیا۔جموں کشمیر عوامی ورکرز پارٹی کے مرکزی راہنماء کامریڈ بابا جان اور کامریڈ فانوس گجرکی جہد مسلسل کے تذکرے کے بغیر آپ کی جدوجہد کا باب مکمل نہیں ہو سکتا۔گلگت بلتستان میں متاثرین جھیل عطا آباد سے لے کر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور وسائل کی سر عامی نیلامی اور نو آبادیاتی قوانین کے تسلط کے خلاف پاکستانی ریاست و کھٹ پتلی گلگت بلتستان کی حکومتوں کے استحصال و جبر کا نشانہ بننے والے کامریڈ بابا جان اس وقت اسیری کی زندگی کاٹ رہے ہیں کامریڈ بابا جان اور دیگر اسیران کی رہائی اور بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو گلگت بلتستان سمیت دنیا بھر میں کامریڈ فانوس گجر نے پارٹی کے مرکزی ترجمان فاروق طارق اور جموں کشمیر عوامی ورکرز پارٹی کے چیرمین نثار شاہ ایڈووکیٹ کے ہمراہ حقیقی معنوں میں اجاگر کیا ۔گلگت بلتستان اور آزاد جموں کشمیر کے خصوصی دورے کیے ۔منقسم ریاست کی بحالی وحدت اور نوآبادیاتی مسلط قوانین کے خاتمے بارے اپنی تر صلاحیتوں کو بروئے کا ر لایا۔بے شک کامریڈ فانوس گجر پاکستان میں محکوم و استحصال زدہ ریاست کے باشندگان کی توانا آواز اور پشتبان تھے ۔(ختم شد)

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں