استغفراللہ،اپنی ہی فیملی ممبرنے معصوم لڑکی کوزیادتی کانشانہ بناڈالا

لندن(www.dailyajknews.com)سات سال کی عمرمیں ہاؤس آف ہاررمیں ریپ اورزیادتی کانشانہ بننے والی خاتون نے اپنی ہی فیملی پرحملوں کاالزام عائدکیاہے۔میررکے مطابق معصوم مصباح قیصرکواس وقت الجھن کاسامناکرناپڑتاجب اسے نیندسے بیدارکردیاجاتااوراس کی فیملی کے ہاؤس آف ہاررمیں اس کے ساتھ جوکچھ کیاگیااس نے اسے ششدرکرکے رکھ دیا۔وہ اس وقت 9 سال کی تھی جب اس کے ایک زائدعمررشتہ دارنے اسے نیندسے بیدارکرکے اپنے ازدواجی بسترپرلے جاکرپہلی بارریپ کیا۔جسمانی تکلیف بہت زیادتی تھی مگراسکی ذہنی افراتفری کاآغازہورہاتھا۔صباح کیلئے یہ آزمائش اورمشکلات آٹھ سال جاری رہیں۔اس سے زیادتی کرنے والے رشتہ دارنے پہلی باراسے صرف ساتھ سال کی عمرمیں بے آبروکیا،وہ ایک بچہ بازگروہ کارکن تھااوراپنی قابل احترام فیملی کے مکان سے باہراپنامکروہ دھندہ چلارہاتھا۔صباح کی مددکیلئے چیخیں اسکی فیملی،سوشل سروسزاورپولیس کی جانب سے بھی نظراندازکی گئیں۔اس نے بعدازاں ایک کونسلرکواپنی رودادلکھ کربھیجی مگراس نے بھی اسے نشانی کانشانہ بناڈالا۔صباح جس کی مشکلات کاکرمنل انجریزکمپنزیشن اتھارٹی نے اعتراف کیا،اس کاکہناتھاکہ ایک بچہ بازصرف بچہ بازہوتاہے۔زیادتی کرنے والاجلدکارنگ نہیں دیکھتامگرایشائی کمیونٹیزقدیم دورکی ان حرکات سے متاثرہیں کیونکہ ایک جنسی جرم ہے اس لئے الزام صرف عورت پرہی آتاہے۔یہ لڑکی کیلئے باعث شرمگاہ ہوگاحملہ آورپرنہیں۔صباح کے والدکاانتقال اس وقت ہوگیاتھاجب وہ دوسال کی تھی۔اس کی ماں ایک دیندارمسلمان تھی جوکہ پاکستان سے برسٹل منتقل ہوئی تھی۔جب صباح نے مددکیلئے اپنی ماں کواپنے ساتھ بیتنے والی سرگزشت سے آگاہ کیاتووہ خاندان میں بدنامی سے اس حدتک خوفزدہ ہوگئی کہ اپنی (تیرہ)13 بیٹی کوکہاکہ خودکہیں پانی میں ڈوب کرمرجاؤ۔ٹین ایجراس آزمائش سے نجات پانے سے قبل مزیدکئی برس تک ان زیادتیوں کانشانہ بنتی رہی۔اب43 سال کی عمرمیں دوبچوں کی ماں بعض برٹش ایشیائی فیملیزمیں خفیہ طورپرہونے والی ان جنسی زیادتیوں کوبے نقاب کررہی ہے۔اس نے اپنی تلخ یاداشتیں ٹیلفورڈابیوزسکینڈل کے پس منظرمیں بیان کی ہیں۔جس سے صرف دوہفتے قبل ہی میررنے بتایاکہ کہ وہ شروپشائرٹاؤن میں ایشیائی لڑکیاں کس طرح زیادتی کے بعدبھی خاموش ہیں۔ان کی کہانیاں بھی صباح کے ساتھ بیتی ہوئی خوفناک راتوں کی طرح ہیں۔اس کاکہناتھاکہ میرے لیے یہ جرم بدترین تھاجب فیملی بھی سب کچھ جانتے ہوئے کچھ نہیں کررہی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں