استغفراللہ،لڑکی نے ناجائزبچہ کوجنم دیکرایساکام کیاجسے سن کرآپ کے غصہ کی انتہانہ ہوگی

(اے جے کے نیوز)2013میں ایک لڑکی نے اپنے خاندان سے حمل چھپالیا،عائشہ طارق جواب 23سال کی ہے اس نےاپنے گھروالوں سے اپناحمل چھپالیا.-تفصیلات کے مطابق برطانیہ کے شہربریڈفورڈمیں تحقیقات کے دوران انکشاف ہواکہ ایک نوعمرلڑکی جسکانام عائشہ طارق ہے گھروالوں سے اپناحمل چھپالیا اوراپنی نومولودبچی کی نعش 6دن تک جوتوں کے ڈبے میں چھپائی رکھی.عائشہ طارق جواب23سال کی ہے تحقیقات کے دوران اس وقت روپڑی جب اس نے 36 سوالات کے جوابات دینے سے انکارکردیاجواس سے بچی کی پیدائش کے متعلق پوچھے گئے جو27فروری 2013کواس کے گھرکیتھلے میں پیداہوئی تھی.اس نے کہاکہ بچی مردہ پیداہوئی تھی اس وقت میری عمر19برس تھی اس کی نعش کوایک ڈبے میں ڈالااوراپنے گندے کپڑے بھی کچڑے کے لفافے میں ڈال کراپنے بسترکے نیچے چھپادیئے تھے.وہ اس وقت 19سال کی تھی اس کی ماں تسلیم اخترنے جب کمرے سے بدبوآنے کی شکایت کی تواس نے رازاگل دیااورکہاکہ جب وہ ایک کلب سے واپس آرہی تھی تودوآدمیوں نے اس سے زیادتی کی اوروہ حاملہ ہوگئی.اس کی ماں نے کچرے کابیگ اورجوتے کاڈبہ اپنی کارمیں رکھا اورایمرجنسی مانگنے ڈاکٹرسے وقت مانگنے کی ناکام کوشش کی.پیدائش کے 6دن بعدنعش ایئرڈیل جنرل ہسپتال میں لائی گئ جہاں مس طارق نے ڈاکٹروں کوبتایاکہ بچی مردہ پیداہوئی تھی.ابتدائی طورپرخاتون نے پولیس کوتفصیل سے بتایاکہ کس طرح خاتون اس کے ساتھ زیادتی کی گئی لیکن بعدمیں اس نے انکشاف کیاکہ اس نے جھوٹی کہانی سنائی تھی اوردراصل وہ کسی سے اپنی رضامندی سے خفیہ اورناجائزتعلق رکھتی تھی.پولیس نے اسے شیرگواربچی کوقتل کرنے کے شبہ میں گرفتارکیاہےاس کے علاوہ اس پرجھوٹی کہانی سناکرعدالت کوگمراہ کرنے کی کوشش اوربچی کی تدفین کے عمل کوروکنے کابھی الزام ہے.اس کوماں کوبھی عدالت کوگمراہ کرنے اورتدفین نہ کرنے کے الزام میں گرفتارکیاگیاہے.پردے کے پیچھے بیٹھ کرمس طارق نےبتایاکہ وہ اسکے حمل کے بارے میں خوفزدہ تھی.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں